01
May
2019

New Municipal System Act Approval in Punjab 2019

New Municipal System

Approval of New Municipal System in Punjab Assembly.The National Accountability Mechanism passed by the Punjab Assembly will apply to the Punjab under the constitution drafting. This system will be selected on the basis of non-governmental elections in the Valley Council in the Valley and in the Vajpayee Council, in the villages.Tehsil and municipal level on the basis of the elected basis Will be and other groups will be bound to adopt.

Under the Bill, the District Council and Union Council will be held instead of the Council and Council of Ministers. Willis and Maulah Council will be the free list of election and will be the most attorney candidate. This will be the deputy chairman who will get less votes and all other posts will be distributed on the basis of the same vote.

The new legislative system bill will now be sent to the Governer. With the approval of bill the municipal institutions will be dissolved as soon as possible. Then the Government will be bound to make an election. New Local Government Tehsil Council, Religious Council, Neber-Hud Council, Municipal Corporation and Metropolitan will be present.

Providing Metropolitan Provinces to districts of the province.There will be no conditions of education for the election. In the new bill, specific versions of teens and techocritettes have been removed.

The Assembly will be decided by the show of hand in assemblies of the Orthodox council, as the duration of the municipal institutions will be four years. In the first and fourth year, the Khafaf Movement of any chairman and deputy chairman will not be able to offer any confidence. Provide Punjab budget to thirty-two percent share of municipalities.

پنجاب اسمبلی میں نئے بلدیاتی نظام کا بل منظور.


پنجاب اسمبلی سے منظور ہونےوالا نیابلدیاتی نظام دومسودات قانون کےتحت پنجاب بھرمیں لاگوہوگا۔اس نظام کےتحت دیہات میں ویلیج کونسل اورشہروں میں محلہ کونسل کا انتخاب غیرجماعتی بنیادوں پرہوگا۔نئے بلدیاتی بل کے تحت تحصیل اور میونسپل کی سطح پرانتخاب جماعتی بنیادوں پرہوں گے۔ اورسیاسی جماعتیں اپناپینل دینے کی پابند ہوں گے۔

بل کےتحت ضلع کونسل اور یونین کونسل کی بجائےتحصیل اورویلیج کونسل کانظام قائم ہوگا۔ ویلیج اورمحلہ کونسل میں فری لسٹ الیکشن ہوگااورزیادہ ووٹ حاصل کرنےوالا امیدوارچیئرمین بن جائے گا۔۔۔اس سے کم ووٹ حاصل کرنے والا ڈپٹی چیئرمیں ہو گا اور اسی طرح ووٹوں کی بنیاد پر دیگر تمام عہدے تقسیم کیے جائیں گے۔ نئےبلدیاتی نظام کابل اب گورنرپنجاب کو بھیجا جائےگا۔ ان کی منظوری کےساتھ ہی بلدیاتی ادارے تحلیل ہوجائیں گے۔پھرحکومت ایک سال کےاندر اندرانتخابات کرانے کی پابند ہوگی. نئی لوکل گورنمنٹ تحصیل کونسل،ویلیج کونسل، نیبر ہڈ کونسل ، میونسپل کارپوریشن اورمیٹروپولیٹن پرمشتمل ہوگی۔صوبے کےنو اضلاع کو میٹروپولیٹن کادرجہ دیاجائےگا۔

بلدیاتی انتخابات کےلیےامیدواروں پرتعلیم کی شرط بھی نہیں ہوگی۔ نئے بل میں نوجوانوں اورٹیکنوکریٹ کی مخصوص نسشتیں ختم کردی گئی ہیں. ویلج کونسل اورنیبرہڈ کونسل کی اسمبلیوں میں فیصلہ شو آف ہینڈ کے ذریعے ہو گاجبکہ بلدیاتی اداروں کی مدت چار سال ہوگی۔ پہلے اور چوتھے سال کسی چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین کے خاف تحریک عدم اعتماد بھی پیش نہیں کی جاسکے گی. بلدیاتی اداروں کو پنجاب کے بجٹ کاتینتیس فیصدحصہ دیاجائے.

You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *